ابتدائیہ

موجودہ دور میں ہر ایک اردو کے بگڑتی  حالت کا رونا رو رہا ہے۔ اور بظاہر اردو سے پیسے کمانے والے نام نہاد ادیب، شاعر، پروفیسر اور صحافی اردو کے زوال پر ماتھا پچی کرنے کے لیے بڑے بڑے سیمینار اور محفلوں کا انعقاد کرتے ہیں جہاں کرسیاں زیادہ اور سامعین کم دکھائی دیتے ہیں۔ یہ بتانے کی ضرورت نہیں ہے کہ ان جلسوں میں بے تحاشہ پیسہ خرچ کیا جاتا ہے مگر نتیجہ صفر ہے کیونکہ اردو کی ترویج کے لئے جہاں کام کی ضرورت ہے وہاں کام نہ ہوکر اپنی کتابیں چھاپنے، مشاعرے پڑھنے اور گیسٹ فیکلٹی بننے کی دوڑ میں ہر ایک دیوانہ بنا ہوا ہے۔ المیہ ہے ہے کہ آج کے دور میں شاعر زیادہ اور سامعین کم، مصنفین زیادہ اور قارئین کم، اساتذہ زیادہ اور طلبہ کم ہیں اور اردو کی یہ حالت کم و بیش ہر جگہ پائی جاتی ہے۔  جو شاعر ہیں وہ دیوان پر دیوان چھاپتے جا رہے ہیں۔ مترجمین اور مصنفین کتابوں سے الماریاں بھر رہے ہیں۔ روز نت نئے اخبارات کا اجرا ہو رہا ہے مگر ان سب میں اردو کی خدمت کہیں مفقود ہے جس کی کسی کو بھی پرواہ نہیں ہے بجز چند غریب، غیر مشہور لکھاریوں کے جو اردو سے حقیقی محبت کرتے ہیں اور اس محبت کا کوئی عوض وصول نہیں کرتے ہیں۔

اردو زبان کی خدمت کئی طریقے سے کی جا سکتی ہے۔ اور آج کے اس دور میں اردو کی سب سے بڑی خدمت چھوٹے بچوں کے دلوں میں اردو زبان کی محبت کو جگانا ہے اور ان کو اردو سکھانا ہے۔ اور یہ تب ہی ممکن ہے جب اپنے گھر میں اردو کا ماحول پیدا کیا جائے وگرنہ راہ عشق میں ہزار ہاو ہو عبث۔ 

انہی کوششوں میں ایک کوشش اردو میں وہ مواد اور متن فراہم کرنا ہے جو غیر معمولی اور دلچسپ تو ہیں مگر اردو میں موجود نہٰں ہیں۔ اردو زبان کے تعلق سے ہمیشہ یہ کہا جاتا رہا ہےکہ اردو محض چند موضوعات پر اکتفا کرتی ہے جیسے، ادب، مذہب وغیرہ اور دیگر موضوعات جیسے، سائنس، جغرافیہ، فنون لطیفہ، نت نئے ایجادات، فلکیات وغیرہ سے متعلق لٹریچر اردو میں ناپید ہیں۔ صحافت کا میدان بھی کچھ قابل ذکر نہیں ہے کیونکہ اکثر اخبار اور رسائل کاپی پیسٹ سے کام چلاتے ہیں اور بعض تو املا کی درستی بھی گوارہ نہیں کرتے ہیں۔ اس سلسلہ میں اردو ویکیپیڈیا کا تذکرہ قابل فخر ہے کیونکہ وہاں کچھ ایسا ہی کام ہو رہا ہے لیکن ویکیپیڈیا چونکہ دائرة المعارف ہے جہاں صرف معلومات جمع کردی جاتی ہیں تاکہ ہر ایک اپنی ضرورت کے حساب سے استفادہ کرتے ہیں۔ لہذا ہمیں ایک ایسی ہولت کی ضرورت ہے جو قاری کی دلچسپیکو دھیان میں رکھتے ہوئے دیگر زبانوں سے ترجمہ کرکے اردو میں دلچسپ معلومات اور مضامین فراہم کرسکے۔  ایسے میں فیسمین نے تمام قارئین تک اردو زبان میں ان موضوعات کو پہونچانے کا بیڑہ اٹھایا ہے جو اول تو اردو میں پڑحنے کو نہیں ملتے ہیں، دوم یہ کہ وہ معلومات اور متن بہت اہم اور دلچسپ میں اس لحاظ سے کہ قاری اس کی طرف راغب ہو اور مزید پڑھنے کی طرف دلچسپی بڑھے۔ فیسمین کا ارادہ اردو قارئین کو اردو زبان سے جوڑنا ہے اور یہ بتانا ہے کہ اردو کے قاری کسی دوسری زبان کے محتاج نہیں ہیں۔ لیکن اس کے لیے فیسمین تن تنہا کچھ نہیں کر سکتی۔ فیسمین کے تمام قاری کو فیسمین لکھنے کی دعوت دی جاتی ہے۔ خصوصا مترجمین کا استقبال ہے۔تمام اردو کے جاننے والوں، اس میٹھی زبان کی محبت کا دعوی کرنے والوں، اردوکے زوال کا رونا رونے والوں، اچھی معلومات کے متلاشی اور معیاری ادب کے پرستاروں کی خدمت میں فیسمین عرض ہے۔ خود بھی قریب آئیں، اوروں کو بھی بتائیں، اس کی تشہیر کریں اور ارمعیاری اردو کی ترویج میں حصہ لیں۔ 

  • فیسمیں پر ہماری کوشش رہے گی کہ ہم دیگر زبانوں کے متن کو اردو میں ترجمہ کرکے شائع کریں۔ 
  • فیسمین کاپی پیسٹ کے سخت خلاف۔ فیسمین پر اردو کی  کسی دوسری ویبسائٹ، اخبار یا مجلہ کا کوئی مواد شائع نہیں ہوگا۔ بقدر ضرورت با حوالہ شائع کیا جا سکتا ہے۔
  • فیسمین اردو کے ان لکھاریوں پر زیادہ توجہ دے گی جو اردو کے علاوہ کسی اور زبان کو جانتے ہوں اور اردو میں ترجمہ کرتے ہوں۔
  • اگر آپ میں مذکورہ صلاحیت و دلچسپی ہے اور کہیں آپ کو لکھنے کی جگہ نہیں ملتی ہے تو فیسمین پر آپ کا استقبال ہے۔ آپ ہمیں faismeen@yahoo.com پر ای میل کر سکتے ہیں۔ 
  • فیسمین کے تمام مواد کاپی رائٹ شدہ ہیں۔ یہاں سے بلا اجازت کچھ بھی کاپی کرنا، نقل کرنا اور کہیں شائع کرنا سخت منع ہے۔ بصورت دیگر کارروائی کی جا سکتی ہے۔
  • فیسمین کی تشہیر کے لیے فیسبک، ٹویٹر، لنکڈ ان، انسٹا گرام اور دیگر سماجی روابط اور ذرائع ابلاغ پر اسے نشر کریں، دوستوں کو بتائیں اور پڑھے و لکھنے والوں کو اس سے قریب کریں۔ 
  • مضامین کے علاوہ اگر آپ کو کوئی کتاب بصورت پ ڈ ف درکار ہو، کچھ جانکاری درکار ہو، اردو سے متعلق کچھ کشورہ درکار، پڑھنے لکھنے سے متعلق کچھ گفتگو کرنی ہو تو بلا جھجک آپ فیسمین سے رابطہ کر سکتے ہیں۔ 
  •  
Tagged , , , , , , . Bookmark the permalink.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے